‏کشمیر کا سفیر،عالم اسلام کا ترجمان وزیراعظم پاکستان عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے جنرل اسمبلی سے اپنے خطاب میں 10 نکاتی ایجنڈا
پیش کیا۔ ان کے اس دس نکاتی ایجنڈے میں ریاست مدینہ انسانیت
کی فلاح عالمی امن و خطے کی سلامتی
کرونا و عالمی بحرانوں کا تدارک
کرپشن و منی لانڈرنگ کے خاتمے پر عالمی قوانین۔ماحولیاتی تبدیلی کی وجہ سے ہونے والے اثرات ۔
اسلامو فوبیا اور بھارتی ہندوں کی جارحیت مسئلہ کشمیر پر بات چیت
افغانستان وفلسطین کا پرامن حل
افغان پناہ گزینوں کی اپنے وطن جلد
واپسی ۔وزیر اعظم عمران خان نے اپنے خطاب میں کشمیری عوام اور افغان عوام کی شاندار وکالت کی عالمی برادری کے ضمیر پر دو ٹوک دستک دیتے ہوے ۔بھارتی دھشت گردی و انتہا پسندی اور مودی سرکار کا بھیانک چہرہ سب کو دیکھایا۔
وزیر اعظم عمران خان نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے
ہوے کہا کہ غریب ممالک سے کرپشن کے زریعے لوٹی ہوئی دولت دنیا میں ٹیکس چوروں کی جنتوں سے ان ملکوں کو واپس لوٹائی جاۓ جہاں سے یہ دولت چوری کی گئ تھی۔وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ جنرل اسمبلی کو غیرقانونی مالیاتی منتقلی، اور لوٹی گئی تمام رقم کی واپسی کیلئے موثر قانونی فریم ورک بنانا دینا چاہیے
‏ترقی پذیر ملکوں کو کورونا بحران کی وجہ ان بحران سے نمٹنے کیلئے مالی وسائل درکار تھے، ایسے ممالک کو
‏یہ جانناضروری ہے کہ بدعنوان اشرافیہ کیطرف سے رقوم کی منتقلی کی نسبت جو مالی امداد فراہم کی گی وہ بہت کم ہے،‏غریب ممالک سے پیسہ کرپشن کے ذریعے امیر ممالک منتقل ہو جاتا ہے،‏اگر اس پر قابو نہ پایا گیا تو دنیا میں غریب اور امیر کے درمیان فرق بڑھتا چلا جاے گا۔
‏امیرممالک میں اس مجرمانہ سرگرمی کی روک تھام کیلئے سیاسی عزم کی کمی ہے،منی لانڈرنگ کرنیوالے طاقت ور عناصر کی رسائی بہترین وکلا تک ہے،
اور ایسے ‏امیر ملک جو منی لانڈرنگ کرنے والوں کو تحفظ فراہم کرتے ہیں۔وہ انسانی حقوق وانصاف کی بات نہیں کرسکتے۔
(یاد رہے پاکستان کے سیاستدانوں کے اربوں ڈالرز کے غیر ملکی اثاثوں کا انکشاف پانامہ میں بھی ہو چکا ہے ‏بھارت دنیا بھر میں اسلاموفوبیا کو فروغ دے رہا ہے۔بھارت کے صوبہ آسام میں 20 لاکھ مسلمانوں کو ان کی شہریت سےمحروم کردیا گیا ہے
بھارت میں ‏مسلمانوں کا بائیکاٹ کرکے ان کا کاروبار تباہ کیا جا رہا ہے۔
‏گاندھی اورنہرو کا نظریہ آر ایس ایس نظریے میں بدل دیا گیا ہے۔‏بھارت کو ہندو ریاست بنانے کیلئے مسلمانوں کا قتل عام کیا جا رہا ہے،‏جس طرح نازی جرمن یہودیوں کےخلاف تھے، اس طرح آر ایس ایس مسلمانوں کے خلاف ہے۔
‏آر ایس ایس کے غنڈے مسلمانوں کو حملوں کا نشانہ بنا رہے ہیں۔
‏گجرات میں 2002 میں قتل عام نریندرمودی کی سرپرستی میں ہوا،
‏5اگست کومقبوضہ کشمیرکی قانونی حیثیت یکطرفہ طور پر تبدیل کی گئی،
‏80 لاکھ کشمیریوں کو محصور کرنے کیلئے فوج تعینات کی گئی ہے۔
‏مقبوضہ کشمیر میں ہزاروں نوجوانوں کو غیر قانونی طور پر اٹھایا گیا،
‏بھارتی افواج کے مظالم اقوام متحدہ کی رپورٹ میں درج ہیں،‏بھارت میں بابری مسجد کوشہید کیا گیا
‏پاکستان نے ہمیشہ پر امن حل کی بات کی ہے۔بھارت 5 اگست کو کیا گیا اپنا کشمیری عوام پر جارجیت کا اقدامات واپس لے،‏بھارت سب سے پہلے مقبوضہ کشمیرکی سابق حیثیت بحال کرے،
‏بھارت نےاشتعال انگیزی کی توپاکستان دفاع کیلئے ہر ممکن اقدام کرے گا،
‏بھارت کشمیر سے توجہ ہٹانے کیلئے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کرتارہتا ہے،‏پاکستان کنٹرول لائن اور ورکنگ باونڈری پر بھارتی اشتعال انگیزی اور خلاف ورزیوں کے باوجود ضبط کا مظاہرہ کررہا ہے، اور ہم
‏افغانستان کے اندر اور باہر سے بگاڑ پیدا کرنے و الے عناصر کو امن کا عمل خراب کرنے ہرگز اجازت نہیں دیں گے،
‏افغان پناہ گزینوں کی جلد واپسی بھی سیاسی حل کا حصہ ہونا چاہیے۔
وزیر اعظم عمران خان نے جس طرح جنرل اسمبلی میں مقبوضہ کشمیر اور افغان عوام کی شاندار و زبردست وکالت، عالمی برادری کے ضمیر پر دو ٹوک دستک اور دھشت گرد و انتہا پسند مودی سرکار کا بھیانک چہرہ سب کو دیکھایا وہ لائق تحسین ہے ۔

About ویب ڈیسک

Check Also

تنظیم سازی

لفظ ” تنظیم سازی“ تمام سیاسی پارٹیز کیلئے ایک ”گالی“ بن کر رہ گیا ہے،امید …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے