آٹا چینی کے بعد پیٹرول بحران کا ماسٹر مائنڈ کون ???

اسلام آباد
چینی بحران، آٹا بحران اور اب پیٹرولیم بحران میں بھی وزیراعظم اور حکومت کے مافیاز کے سامنے اچانک گھٹنے ٹیک دینے میں مبینہ طور پر پرنسپل سیکرٹری ٹو پی ایم اعظم خان کا نام سامنے آ رہا ہے۔ اعظم خان کو جب عمران خان نے حکومت سنبھالنے کے بعد پرنسپل سیکرٹری تعینات کیا تو ابتدا سے ہی حکومت کاروبار مملکت چلانے میں مفلوج دکھائی دینے لگی، کیونکہ ملک کی افسرشاہی اور پرنسپل سیکرٹری اعظم خان کے درمیان وسیع خلیج موجود تھی اور اعظم خان کا کے پی کے میں تعینات چند افسران کے علاوہ کسی سے رابطہ نہیں تھا۔ تب سے اب تک اعظم خان پے درپے مشکلات کا باعث بن رہے ہیں، پرنسپل سیکرٹری حکومت اور افسر شاہی کے درمیان پل کا کردار ادا کرنے کے بجائے مبینہ طور خلیج کا باعث بن گئے اور ابتداء سے چینی بحران تک بار بار وزیراعظم کو مشورہ دیا گیا کہ وہ پرنسپل سیکرٹری تبدیل کریں۔ اس سے قبل جہانگیر ترین جن کا حکومت سازی میں اہم کردار تھا بھی اعظم خان کی وجہ سے وزیراعظم کا ساتھ چھوڑ گئے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ اسلام آباد میں پلاٹوں کی خلاف میرٹ الاٹمنٹ جو عدالت میں چیلنج ہو گئیں اور ٹاپ بیوروکرسی میں خلاف میرٹ ترقیوں میں بھی اعظم خان پر انگلیاں اٹھائی جا رہی ہیں۔ ادھر پیٹرول کے حالیہ بحران پر چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے اعظم خان اور سیکرٹری پیٹرولیم کو طلب کیا تھا، تاہم وہ پیش نہیں ہوئے اور عدالت نے سیکریٹری پیٹرولیم کی سرزنش کی اور اب اعظم خان کو ذاتی طور پر پیش ہونے کا حکم دے رکھا ہے۔
مستند ذرائع کا کہنا یے کہ عدالت میں پیش نہ ہونے سے یہ تاثر ابھرا ہے کہ اعظم خان خود کو قانون اور ضابطے سے بالاتر سمجھتے ہیں اس لیئے وہ عدالتوں کی طلبی پر بھی پیش نہیں ہوتے۔ ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ شوگر کرائسز اور پیٹرولیم کرائسز کے ذمہ دار مافیاز کی رسائی بھی اعظم خان تک ہے اور اسی وجہ سے ان مافیاز کے خلاف حکومتی سطح پر کارروائی نہیں ہو سکی، جس کی ممکنہ وجوہات میں سے ایک یہ ہو سکتی ہے کہ مافیاز کی طرف سے "بھید” کھول دینے کا خوف اور دوسری خود کو قانون سے بالاتر سمجھنا ہو سکتی ہے۔ اور حکومت کو سیاسی میدان اور گڈ گورننس کے محاذ پر ناکامی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ اب جب کہ پیٹرول بحران ہے، تو اچانک راتوں رات پیٹرولیم کی قیمتوں میں تاریخی اضافے میں بھی اعظم خان کا مبینہ کردار ہے اور اتنا زیادہ اچانک اضافہ یکم تاریخ کا بھی انتظار کیئے بنا کیا گیا۔ اس سے وزیر اعظم جو کہ معاشی بدحالی، خارجہ پالیسی کرونا، سیاسی حلیفوں کی علیحدگی، پارٹی میں دھڑے بندیوں، کابینہ کی لڑائیوں سمیت پہلے ہی مشکلات کا شکار ہیں مزید بحرانوں میں گھر گئے ہیں اور ایک پرنسپل سیکریٹری کو بچانے کے لیئے عوام اور مقتدر حلقوں میں اپنی ساکھ گرا بیٹھیں گے۔

About ویب ڈیسک

Check Also

بیورو کریسی نے وفاقی حکومت کو مفلوج کردیا۔

اسلام آباد وفاقی دارالحکومت کی بیوروکریسی نے پی ٹی آئی کی حکومت کو مکمل طور …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے