ویب ڈیسک

کچھ ان دیکھا انجاناسا

انسانی فطرت ہے کہ وہ ہمیشہ اس شے کی طرف لپکتا ہے جس کی اس کی زندگی میں بہت کمی ہوتی ہے۔زر، زمین، عزت، دولت شہرت ہر وہ چیز جس کی انسان کی زندگی میں قلت ہوتی ہے ہمیشہ اس کی جستجو میں لگا رہتا ہے۔اور جہاں اسے تھوڑی بہت بھی امید کی کرن نظر آتی ہے وہ اس کے حصول کیلئے حتی الامکان کوشش کرتا ہے۔انسانی جلد ہی ان …

مزید پڑھیں»

کوہ سلیمان کے بلوچوں کو تعلیم کا حق ملنا چاہیے

(تحریر کائنات ملک ) کوہ سلیمان کے شہکار نظارے سیاحوں کو اپنی طرف کھینچ لیتے ہیں یہ قدرت کےحسین نظارے کسی جنت سے کم نہیں ہیں کوہ سلیمان پاکستان کا پہاڑی سلسلہ ہے جو بلوچستان خیبربختون نخواہ اور پنجاب تک پھیلا ہوا ہے جوکہ جغرافیائی اہمیت کا حامل ہے اس طرح جنوبی پنجاب کا خوبصورت پہاڑی سلسلہ کوہ سلیمان 6770فٹ بلندی پر واقع ہے یہ سیاحتی مقام ہے سردیوں میں …

مزید پڑھیں»

سی ڈی آر ایس کے تعاون سے صحافیوں میں راشن کی تقسیم

(رپورٹ کائنات ملک ) گزشتہ روز کیپری ہنسو ڈیزاسٹر ریسپانس سروسز (سی ڈی آر ایس) کے تعاون سے ملک کے مختلف حصوں میں صحافیوں میں خوراک اور ادویات کی تقسیم کی گئی جن میں صحافی برادری میں دوسو راشن کے تھیلے تقسیم کیے گئے سی ڈی ار ایس ملک میں کرونا وائرس کے حوالے سے پیدا شدہ معاشی صورتحال کےدوران پیدا ہونے والے انتہائی بحران سے دوچار لوگوں کی خدمت …

مزید پڑھیں»

کورونا وائرس، فاقہ کش مزدور طبقہ اور فلاحی اداے

پاکستان سمیت دنیا بھر میں کورونا وائرس کی وبا38لاکھ سے زائد انسانوں کو بیمار اور تقریبا 2لاکھ 67ہزار کو ہلاک کر چکی ہے۔ اب تک اس وائرس سے پاکستان میں تقریباََ25ہزار متاثر جبکہ 600کے قریب جاں بحق ہوچکے ہیں۔اس عالمگیر وبا نے امیر غریب کافرق مٹاکر سب کو بْرے طریقے سے جھنجھوڑ کردکھ دیا ہے۔ کورونا وائرس سے کاروباری زندگی کو تباہ ہوگیا ہے۔کروڑوں لوگ اپنی ملازمتیں کھو بیٹھے ہیں …

مزید پڑھیں»

ضلع راجن پور کے صحافیوں کا حکومتی اداروں کی کوریج کا بیکاٹ کا اعلان

(رپورٹ کائنات ملک ) شعبہ صحافت کو ملک کا چوتھا ستون کہا جاتا ہے اور صحافی کو اس معاشرے کی انکھ اور زبان سمجھا جاتا ہے معاشرے میں جہاں جہاں ظلم و۔زیادتی ناانصافی کا بازار گرم ہو وہاں پر اس کمزور طبقہ کی نمائندگی کرتے ہوے اس کی آواز بن کر ایوان اقتدار کی خاموش گھنٹیوں کو بجا کر ان کو جاگانا اپنا فرض اولین سمجھتا ہے صحافی خود کو …

مزید پڑھیں»

راجن پور پرائیوٹ و پیف ٹیچرز کا معاشی استحصال کیا جانے لگا حکومت نوٹس لے

پیف سکولوں میں پڑھانے والی صفیہ کریم۔ راحیلہ بی بی ۔ آصفہ جنید اور وقار حسین۔ مرتضی صدیقی۔ احمد رضا خان۔ محمد حسن بلوچ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا یے کہ پرائیوٹ و پیف ٹیچرز کا معاشی استحصال ہر صورت بند کیا جائے حکومت اس سب کی ذمہ دار ہے سرکاری قانون کے مطابق 17500 روپے تنخواہ بنتی ہےہر سرکاری و پرائیویٹ ادارہ دینے کا پابند ہے تو …

مزید پڑھیں»

کیا اب بھی احتیاط نہییں کریں گے آپ؟ ۔۔ "لمحہ فکریہ

 ارد گرد بس پانی ہی پانی تھا   ،چاروں طرف شدید اندھیرا،  وہ شاید گہرا سمندر تھا، میں ڈوبتا جا رہا تھا ، میرے سینےمیں عجیب سا دباؤ پڑ رہا تھا، سانس لینے میں بہت دشواری ہو رہی تھی،  آہستہ آہستہ میرے پورے جسم میں پانی بھر رہاتھا ،  میں شاید اپنی آخری سانسیں لے رہا تھا–   شدید گھٹن تھی، پھیپھڑوں میں پانی بھر گیا تھا اور بس جان نکلنے کو تھی۔ اُف اچانک سے میری آنکھ کھلی میں پوری طرح سے پسینے میں شرابور تھا،  میرا پور پور دکھ رہا تھا اور کمرے میں چاروںطرف اندھیرا تھا –  الماری کی سائڈ پہ اک چھوٹے سے زیرو بلب سے پیلی پیلی روشنی پھوٹ رہی تھی اور کارپیٹ پہاک لکیر کھینچ رہی تھی ، میں نے فوراً موبائل پہ دیکھا رات كے دو بجے تھے،  میں اٹھ کر بیٹھ گیا،  چاھے یہ خواب تھا ، ہاںیہ خواب ہی تھا ، لیکن مجھے سانس لینے میں دشواری ہو رہی تھی–  میرے سینے میں ہلکی سی درد تھی میں نہ تو  شوگر کامریض ہوں نہ ہی میرا بلڈ پریشر بھڑتا ہے اور نہ ہی کولسٹرول کی بیماری ہے ، پِھر یہ چیسٹ پین ؟ مجھے کل سے ہیظہ   کامسئلہ ہو رہا تھا، لیکن میں نے اسے عام معدے کا مسئلہ ہی سمجھا ،گولی لی بہتر ھو گیا، لیکن جسم میں کراہت سی تھی–  میں نے دو چار بار  زور زور سے سانس لیا اور کھانسی کی،  اس سے تھوڑی بہتری آئی ، میں آنکھوں كے شعبے سے منسلکاک ڈاکٹر ہوں – آج کل ویسے بھی ہمیں چھوٹی چھوٹی باتوں پہ ایسے وسوسے ہوتے رہتے ہیں– میں یہی سوچتے ہوئے اپنےآپ کو تسلی دے رہا تھا کیونکہ اور کوئی چارا نہیں تھا–  صبح ڈیوٹی تھی اور میں اک پی جی ٹرینی ہوں ( پی جی ) یعنی پوسٹگریجویشن کر رہا ہوں –ہمارے ہاں مجبوری کا دوسرا نام پی جی  ٹریننگ ہی ہے –آہا ! آپ نہیں سمجھیں گے شاید ! خیر میںنے بہت سوچا كے طبیعت کچھ ناساز ہے کیا کروں ؟چھٹی کر لوں ؟ شاید آرام کرنے سے بہتر ہو جاؤں– شاید آلٹرنیٹڈیز  پہ یعنی اک دن چھوڑ کر اک دن ڈیوٹی کرنے  کی وجہ سے بے آرامی  ہو گئی ہے –یہی سوچتے ہوئے میں نے سوچاكے سحری کا وقت بھی ہے  ایچ –  او– ڈی  سے بات کرنے کا موقع بھی ہے ، فون کر لیتا ہوں– پِھر سوچا رجسٹرار کوفون کرلوں، لیکن پِھر وہی جملہ یاد آیا جو آج کل  ہر اک کو طبیعت خراب ہونے  پہ بولا جاتا ہے– یار چھوڑو یہ فضول وسوسے، ہر اک کو تھوڑی کرونا  ہونا ہے اب ،تم کرونا کا نام لے کر ڈرامیں نا کرو اور کام چوری نادکھاؤ یا پِھر اپنا فوراً ٹیسٹ کراؤ اور قرنطینہ چلے جاؤ– اِس اک خیال نے مجھے روک دیا كے بے وجہ سب کے مذاق کانشان کیوں بننا؟  کیونکہ ان سب كے خیال سے کرونا کا آنکھوں كے ڈیپارٹمنٹ میں کیا کام میں انہی خیالوں میں تھا كےدروازے پہ دستک ہوئی میری بیگم صاحبہ میرے لیے كھانا لائی تھی سحری کے لیے،  دراصل میں جانتا ہوں شاید آپسب حیران ہو لیکن ہاں مجھے اپنے گھر والوں کا خیال ہے ، مجھے ڈر لگتا ہے اپنے لیے نہیں، اپنے بوڑھے ماں باپ کےلیے،  اپنی ننھی سی پانچ سالا بیٹی کے لیے،  اور دو چھوٹے بھائیوں كے لیے ، اور اپنی بِیوِی كے لیے بھی ا– ِس لیے میںگھر آکر الگ کمرے میں ہی رہتا ہوں– صرف كھانا لیتا ہوں باقی باہر كے کام کر دیتا ہوں تاکہ باقی سب کو باہر نا جانا پڑے– خیر میں نے كھانا کھایا اور وضو کر کے نماز شروع کردی ، اپنے رب کے حضور اپنے اور اپنوں  سمیت ساری  قوم کیسلامتی کی دعا کی،  مجھے ابھی بھی ہلکا ہلکا سینے میں دَرْد تھا  اور سانس لیتے  وقت دھڑکا سا لگ رہا  تھا– میں نے اِسے اپناوہم جانا اور فجر كے بَعْد تھوڑی دیر آرام کی نیت سے لیٹ گیا لیکن نیند نہیں آئی اور اسپتال کے لیے نکلنے کا وقت ہو گیا– میں نے چینج کیا اور نکل پڑا–  سارے راستے میں روزانہ کی طرح لوگوں پہ حیران ہوتا جا  رہا  تھا– نجانے کیسا لاک ڈاؤنتھا یہ، ہر طرف رش ہی رش تھا، لاہور کی کنال روڈ  پر عام دنوں کی طرح ہی جگہ جگہ ٹریفک بلاک ہو رہی تھی–  ارد گردصفائی کرنے  والے، چلنے پھرنے والوں کی تعداد بھی عام دنوں جیسے تھی–  میں بس دِل میں رب سے سب کو ہدایت دینےکی دعا کرتا ہوا اسپتال آ گیا – یہاں بھی عجب سماں ہوتا تھا،  روزانہ کہنے کو لوگ ڈرے ہوئے تھے، لیکن صرف ہلکی پھلکینظر چیک کرانے بھی  ہجوم دَر ہجوم لوگ آؤٹ ڈور میں کھڑے تھے–  جب ان کو سمجھانا چاہو تو کہتے ہیں ڈاکٹر صاحبآپ لوگ کاہلی کا ثبوت دے رہے ہیں اور کچھ نہیں آپ لوگ کام ہی نہیں کرنا چاھتے اور میں روزانہ دِل میں ڈھیروںپریشانی لیے ان لوگوں کی باتوں پہ مسکرا دیتا تھا اور یہ تو شاید جانتے نہیں تھے لیکن میرے ارد گرد میرے اپنے اتنےساتھی تھے جنکی زندگی میں ابھی تک زیادہ کوئی فرق نہیں آیا تھا وہ سمجھتے تھے كے کورونا جانتا ہے كے اس نے آنکھوںكے وارڈ یا آؤٹ ڈور میں نہیں آنا ، اسے پتہ ہے کس جگہ جانا ہے  اور کس  جگہ نہیں –میرے اپنے محترم    ایچ– او– ڈیجو  كے میرے سپر وائزر بھی ہیں، میں نے ان سے پوچھا  كے سر آپ صرف ماسک پہنتے ہیں اور گلوز، کٹس اور گاؤنز کااستعمال نہیں کر رہے ؟ انہوں نے بھی کہا كے اک دن موت تو آنی ہے بے فکر ہو کر جییں  کچھ نہیں ھوگا– وہ مجھسے بہت زیادہ جانتے تھے شاید اِس بیماری كے بارے میں–  ایسا نہیں تھا كے انہیں پتا نہیں تھا  یا وہ ہمارے لیےفکرمند نہیں ہوتے  تھے – وہ ہمیں سب احتیاط کرنے کو کہتے تھے لیکن میں نے ان کو بس سینیٹائز کرنے اور ماسک گلوزپہنے کی حد تک سے زیادہ کی احتیاط کرتے نا دیکھا سوائے آپْریشَن تھیٹر  کے وہ بھی اِس لیے كے کہیں مریض کو کوئیانفیکشن نا چھوئے– میں نے اس دن بہت محترم اور با اَدَب انداز میں انہیں تھوڑا سا کہا كے نہیں سر آپ احتیاط کریںپِھر انہوں نے کہا كے میں آپکے جذبات کی داد دیتا ہوں شاید اِس لیے اتنا بے فکر ہوں کیونکہ اِس وقت میری فیملی ملکسے باہر ہے اور گھر پہ کوئی نہیں جسے میں انفیکٹ کر سکوں باقی میں تو مسیحا ہوں لیکن آپ سب کو احتیاط کی ضرورت ہےجانتے ہیں کیوں شاید اِس لیے كے ہماری جانوں سے زیادہ انکی جانیں بھی ضروری ہیں جو كے ہم سے منسلک ہیں– میں انکیبات سے قطعا متفق نہ تھا اور وہ یہ جانتے تھے اِس لیے مسکرا دیئے اور میرے تھوڑا سا زور دینے پہ انہوں نے بھی پیپی ای  پہننا شروع کر دی  اور اس دن سے جب بھی مجھے دیکھتے مسکرا دیتے تھے– خیر میں بھی آپ لوگوں کو کہں لے گیا– میں تو یہ بتا رہا تھا كے آؤٹ ڈور كے اس ہجوم سے گزر کر میں نے روم میں جا کرچینج کیا اور گاؤن پہننے كے بَعْد ا و . پی . ڈ ی  شروع کردی لیکن جانتے ہیں کیا؟ میرا خدشہ ٹھیك تھا– کچھ ہی دیر میں میریسانس میں پِھر سے دباؤ محسوس ہوا میں اپنے کولیگ کو بتا کر سیدھا لیب گیا –اپنا کووڈ-19 پی سی آر  كے لیے  سیمپل دیااور اس دن میں گھر نہیں گیا میں نے اسپتال كے ہاسٹل میں اپنے کولیگ كے کمرے کا استعمال کیا جو آج کل وہاں رہائشپزیر نہیں تھا –  وہی ہوا جس کا ڈر تھا میرا ٹیسٹ پازیٹو تھا– یہ سنتے ہی مجھے اسپیشلائزڈ 1122 کی ٹیم كے ذریعے کورنٹائنسینٹر منتقل کیا گیا اور ٹھیك دو دن بَعْد میرے گھر میں سے میری پیاری ننھی سی پری کو بھی میرے  ساتھ والے بیڈ پہ لایاگیا اور میری امی جان کو ساتھ والے وارڈ میں شفٹ کیا گیا کیونکہ وہ دونوں بھی پازیٹو تھیں –باقی دو بھائی ،ابو اور بیگم شکراللہ کا ٹھیك تھیں– میری بیٹی کو میرے ساتھ اِس لیے شفٹ کیا گیا تاکہ وہ کچھ سکون میں آجائے وہ بے حد گھبرائی ہوئی تھی، آتے ہی مجھسے  لپٹ گئی تھی میری تو سمجھ میں نہیں آرہا تھا میں اِس وقت کیا کروں– میری آنکھیں آنسوں سے بھر گئی تھی –میں اپنیاِس لاڈلی پری کو کیا تسلی دیتا– چُپ چاپ اسے گلے لگائے بیٹھا رہا اور اسی دوران امی سے بھی ویڈیو کال کرکے حالاحوال پوچھا– وہ فی الحال ٹھیك تھیں، گھر میں بھی بات ہوئی ،سب بے حد غمگین اور پریشان تھے– انہیں سمجھایا اور تسلیدے کر فون بند کر دیا کیونکہ شاید میری ہمت جواب دے رہی تھی – میں دیکھ رہا تھا میری مسکان  یعنی میری بیٹی تومیرے پاس آکر کچھ پرسکون ہوگئی تھی اور آرام سے میرا ہاتھ تھامے بیڈ پہ سو رہی تھی لیکن مجھے ایسا لگ رہا تھا میراسارا خون کسی نے نچوڑ لیا ہو– میں تو سب سے زیادہ احتیاط کر رہا تھا اپنی طرف سے– میں اِس اک مہینے میں بچوں كےپاس بھی شاذو نادر  ہی بیٹھا تھا، اور امی کو بھی جاتے آتے شاید سلام کیا تھا لیکن اَبُو جی کو تو دیکھے ہوئے بھی اتنےدن ہو گئے تھے –سوچتا تھا تو دِل بند ہونے  لگتا تھا، لیکن پِھر بھی اپنے آپکو تسلی دیئے رکھتا تھا كے ابو جی دِل كے مریضہیں اور ان کو بی . پی کا بھی مسئلہ ہے ان سے میں فاصلہ ہی اختیار رکھتا تھا كے کہیں غلطی سے بھی میں قریب نہ ہوں–  روزانہ میں عجیب مشقت سے گزرتا گھر آکر کسی چیز کو ہاتھ نا لگاتا ،آتے ساتھ ہی گاڑی کو دھوپ میں کھڑا کرتا یا سختی سےنصیحت  کرتا كے کوئی بھی پاس نا آئے –پِھر فوراً  نہاتا چینچ کرتا اور تو اور بیگم بھی بچوں كے کمرے میں شفٹ ہوچکی تھی– میں اپنے کمرے میں ہی رہتا اور كھانا بھی وہیں  لیتا  رمضان میں بھی سختی سے میں اسی روٹین کا حصہ بنا ہوا تھااور تو اور باہر بھی میں خود جاتا –اگر کسی دن ایسا محسوس ہوتا كہ میں تو بس قریبی سپر مارکیٹ تک گیا تھا  نہاتا نہیں ہوںایسے سستی بھری سوچ کو بھی میں فوراً جھٹک دیتا تھا تاکہ میری کسی کوتاہی سے بھی یہ وائریس گھر کی دہلیز نا پار کر جائےاور فورنا چینج کرتا اور بال لازمی دھوتا کیونکہ وہ وائریس کو  جذب کرنے کا ذریعہ بن سکتے ہیں– زندگی بہت عجیب ہوگئیتھی یہ بلکل سچ تھا كے جاننے والے اور نا جاننے والے کبھی برابر نہیں ہو سکتے اور شاید ہم جاننے والے یعنی كے ڈاکٹرزاِس وقت شدید ڈپریشن اور اداسی کا شکار ہیں– دو دن سے ہر ہر پل مسکان پہ نظر رکھ رہا  ہوں،  اماں جان کی سانسخراب ہوئی تھی انہیں آکْسِیْجَن لگائی گئی ساتھی دوست یعنی كے ڈیوٹی ڈاکٹرز مجھے آکر  خبر دے دیتے تھے اور تسلی بھیدے رہے تھے –اماں کی طبیعت صبح سے قدرے بہتر تھی– انہوں نے فون پہ بات بھی کی– مسکان بھی شاید میرےساتھ رہنے کی وجہ سے بہل گئی ہے میں اسے اسکی پسند کی کہانیاں سنا دیتا ہوں –ادھر اُدھر چیزوں میں مصروف رکھ رہاہوں اور ناجانے کتنی بار اسکی ماما اسے ویڈیو کال کرتی ہیں– بیگم کو پریشان حال دیکھ کر بس برداشت کر رہا ہوں یہ میریزندگی كے بے حد قرب سے بھرے دن ہیں– ناجانے کہاں غلطی ہوگئی شاید مجھے كھانا نہیں لینا چاھیے تھا  یا شاید کسیوقت گیراج میں کھیلتے وقت مسکان کا ہاتھ گاڑی کو لگ گیا ہوگا یا شاید میں نے کسی وقت گروسری پکڑاتے وقت کہیں ہاتھلگا دیا یا میرے قدموں سے آ گیا پتہ نہیں،  میں نے کں غلطی  کی  لیکن مجھے تو اچھے سے یاد ہے ہماری خبروں میں اوردوسرے چینلز پہ آنے والے حضرت تو کہہ رہے تھے پی پی ای  کی ضرورت صرف کرونا وارڈ میں ہے اِسے آنکھوں والوںیا جلد والے شعبے سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر حظرات کا کیا کام ؟ اُف خدایا رحم کر ! ہم سب پہ رحم کر ! اب ہر سانس كے ساتھ میری زندگی ریت کی طرح میرے ہاتھوں سے پھسل رہی ہے –کئی دفعہ دل کیا تھا نوکری چھوڑدوں لیکن میں تو ٹرینیی ہوں میں نے ٹریننگ چھوڑی تو کیا دوبارہ ملے گی ؟ اور اگر نوکری نہیں ملی تو گھر کا خرچ کیسے چلے کا؟ کبھی اِس بات کا خوف آتا تھا تو کبھی یقین جانیے اس سے کئی زیادہ مسئلہ یہ تھا كے میرا دِل میرا ضمیر مجھے اک پلبھی کیا چین لینے دے گا ؟ میں تو مسیحا ہوں نا ؟قوم کا مسیحا، میں تو نہیں چھوڑ سکتا نا ! اور پِھر کسی بھی اور سوچ کو جگہدیئے بغیر فیصلہ ہو جاتا تھا کے یہ تو عبادت ہے اور یہ جاری رکھنی ہے۔  لیجیے! میں آپ سب کا مسیحا جسے آپ لوگ صرف مسیحا کہتے ہیں پر انسان نہیں سمجھتے، آج صرف مسیحا ہی بن کر رہ گیاہوں– میں نہ اچھا باپ ہوں  نہ بیٹا، اور شاید اچھا شوہر بھی نہیں رہا– یا ایسا کریں اس کا فیصلہ بھی آپ کریں اور ہو سکےتو اِس نام و نہاد مسیحا، جس نے آپکے لیے کچھ نہیں کیا ہے ،جو بس پیسے کماتا ہے، لٹیرا ہے، قصائی ہے ،اسکے کے لیےدعاہی کردیجیئے گا كے کم سے کم وہ روز محشر اپنے گھر والوں کو منہ دکھا سکے– اسکی ننھی سی بچی جسے ابھی دنیا میں آئے کچھسال ہوئے ہیں اور وہ ماں جو اسکو اپنی چھتر چھاؤں میں رکھنے یہاں تک اسکے ساتھ چلی آئی ہے سلامت رہے . . . اللہآپ سب کا حامی و ناصر ہو–آمین!   ہو سکے تو سوچیے گا ضرور! . . . کیا اب بھی احتیاط نہیں کریں گے  آپ؟ لمحہ فکریہ۔۔۔

مزید پڑھیں»

مرشد

موجودہ حالات میں اسلامی ملکوں کے سربراہوں کی ذلالت اور سوائی کو دیکھو اور سمجھ لو کے عزت اور ذلت اللہ کے ہاتھ میں ہے ۔کچھ درویش جنہوں نے فقیری میں زندگی گذاری بس ایک لوٹا ایک برتن پھٹے کپڑوں میں ملبوس مگر لوگ انکو مرشد کہ کر تعظیم میں انکے سامنے جھکا کرتے تھے ۔حاکم وقت ان سے ملاقات کی خواہش کرتا تو اسکو حاضری کی اجزت نہ ملتی …

مزید پڑھیں»

بیرون ملک سے فرنیچر سازی کی مشینری اور میٹیرئل پر ہر قسم کی ڈیوٹی معاف کی جائےچئیرمین پاکستان فرنیچر ایسو سی ایشن زاھد حسین

فرنیچر کے چھوٹےاور درمیانے درجہ کے ریٹیلرز اور مینوفیکچررز جو اکثریت میں کاٹیج انڈسٹری اور چھوٹی ورکشاپس پر مشتمل ہیں کرونا وائرس کی وبا میں شدید مالی بہران کا شکار ہیں اور حکومت سے درج زیل سفارشات کو آئندہ بجٹ کا حصہ بنانے کی اپیل کرتی ہیں -فرنیچردکاندار اور بنانے والے/ ورکشاپس کو بلا سود قرضہ آسان شرائط پر دیا جائے۔ -فرنیچر کی دکان /شورومز کو زیادہ رقبہ درکار ہوتا …

مزید پڑھیں»

شہداء اور مرحومین کو نہیں بھولے۔ایس پی اشتیاق حسین آرائیں

ترجمان موٹروے پولیس سید تراب علی کے مطابق ایڈیشنل آئی جی ساؤتھ ریجن ڈاکٹر آفتاب احمد پٹھان اور ڈی آئی جی ساؤتھ زون ملک مطلوب احمد کی ہدایت پر ایس پی سیکٹر این۔55 اشتیاق حسین آرائیں کی زیر نگرانی،ایس پی آفس سیہون میں لائن آفیسر انسپکٹر شیر زمان ناریجو نے سیکٹر این۔55 کے مرحوم سب انسپکٹر ممتاز ڈاھری کے بیٹے اجمل ڈاھری کو ماہ مبارک رمضان کی مناسبت سے راشن …

مزید پڑھیں»