انصاف کی فراہمی میں عجلت انصاف کودفن کرنے کے مترادف ہے ، چیف جسٹس

لاہور: چیف جسٹس سپریم کورٹ میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ آئین میں بنیادی حقوق تمام شہریوں کیلئے ہیں اورہرشہری کے لئے قانون یکساں ہے،خوش قسمت ہے کہ آئین تحریری شکل میں موجود ہے،ججز فیصلہ کرتے وقت قانون کو مدنظر رکھنے کے پابند ہیں،آئین جنسی امتیازکے بغیر ہ رشہری کومساوی حقوق کی ضمانت دیتاہے. ویمن ججز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ انصاف کی فراہمی میں عجلت انصاف کودفن کرنے کے مترادف ہے اورکوئی بھی جج قانونی تقاضے پورے کئے بغیرفیصلہ نہیں سناتا،کسی جج کوغلط طریقے چلاکرفیصلہ دینے کااختیارنہیں.

چیف جسٹس سپریم کورٹ نے کہا کہ بطور جج ہم ہر شہری کو فوری اور معیاری انصاف فراہم کرنے کے پابند ہیں اس لئے ہمارا ہر قدم قانون کی حکمرانی کےلئے ہونا چاہئے اورجج کو مقدمے سے متعلق قانون پر مکمل عبور ہونا چاہئے،انہوں نے کہا کہ ہم ملک میں قانون کی حکمرانی چاہتے ہیں،جج کیلئے ضروری ہے کہ وہ قانون سے آگاہ ہوں اوردرست فیصلوں کیلئے قانون سے آگاہی کو یقینی بنائیں۔ چیف جسٹس سپریم کورٹ نے کہا کہ ہمیں انصاف کا معیار قانون کے مطابق رکھنا ہوگا،شہروں میں صنفی امتیاز سے متعلق صورتحال مختلف ہے لیکن عدلیہ میں صنفی امتیاز کاخاتمہ اچھا اقدام ہے،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ ماڈل عدالتوں کا قیام بہت اچھا آئیڈیا ہے،ماڈل عدالتوں کے ساتھ دوسری عدالتیں بھی کردار ادا کریں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں