وزیر خارجہ خواجہ آصف تین روزہ دورے پر امریکا روانہ

وفاقی وزیر خارجہ خواجہ آصف تین روزہ دورے پر امریکا روانہ ہوگئے۔ امریکا میں وزیر خارجہ وہاں کی اہم قیادت سے ملاقاتیں کریں گے۔ پاک امریکا سفارتی دوروں کا شیڈول وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور امریکی نائب صدر مائیک پینس کے درمیان اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر ہونے والی ملاقات کے دوران طے پایا تھا۔ وزیر خارجہ خواجہ آصف تین روزہ دورے کے دوران اپنے ہم منصب ریکس ٹلرسن اور امریکی قومی سلامتی کے مشیر مک ماسٹر سے ملاقاتیں کریں گے۔ وزیر خارجہ خواجہ آصف اور امریکی حکام کے درمیان ہونے والی ملاقاتوں کے دوران کشمیر، افغانستان میں قیام امن اور باہمی تعلقات پر بات چیت کی جائے گی۔ دونوں ممالک کے ذمہ داران کے درمیان ہونے والی ملاقاتوں میں جنوبی ایشیا سے متعلق امریکا کی نئی پالیسی پر بھی تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

امریکا روانگی سے قبل وزیر خارجہ خواجہ آصف نے ایک نجی ٹی وی کو انٹرویو میں کہا کہ بھارتی وزیر اعظم دہشت گرد ہیں جس کے ہاتھ مسلمانوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں۔ وزیر خارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ بھارت میں بھارتیہ جنتا پارٹی کی نہیں بلکہ دہشت گرد تنظیم آر ایس ایس کی حکومت ہے اور بی جے پی اس کی ذیلی جماعت ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی دہشت گرد ہے جس کے ہاتھ مسلمانوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ امریکا کے ساتھ ہمارے معاملات الجھے ہوئے ہیں لیکن امریکا کے ساتھ ہم اپنی پوزیشن واضح کرنا چاہتے ہیں، میرے دورے پر سول اور ملٹری قیادت ایک پیج پر ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ نے کہا کہ دنیا میں کہیں بھی دو لاکھ فوج دہشت گردی کے خلاف نہیں لڑ رہی اور دہشت گردی کے خلاف جتنی کامیابی ہم نے حاصل کی اتنی کسی اور نے نہیں کی کیوں کہ فوجی آپریشن پچھلے 4 سال میں مکمل کامیاب ہوئے ہیں۔ خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ میرے دونوں بیانات ایک ہی بیان کا تسلسل ہیں اور نیشنل ایکشن پلان اپنا گھر صاف کرنے کے لیے بنایا گیا تھا جس کے تحت ہمیں اپنا گھر درست کرنا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں