ن لیگ کا آئین تبدیل، نواز شریف کے پارٹی صدر بننے کی راہ ہموار

اسلام آباد: مسلم لیگ ن کی مرکزی مجلس عاملہ نے پارٹی آئین میں ترمیم کے ذریعے ایک اہم تبدیلی کردی۔ اس تبدیلی کے بعد نوازشریف کے پارٹی صدر بننے کے واضح امکانات روشن ہوگئے ہیں۔

مسلم لیگ ن کے قائم مقام صدر سردار یعقوب کی زیر صدارت ن لیگ کی مرکزی مجلس عاملہ کا اجلاس ہوا۔ اس خصوصی اجلاس میں وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف، وزیراعظم شاہد خاقان عباسی، وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور وزیراعلیٰ گلگت بلتستان حفیظ الرحمان سمیت وفاقی وزرا نے بھی شرکت کی۔

ن لیگ کے ذرائع کے مطابق مرکزی مجلس عاملہ نے پارٹی آئین میں ترمیم کی منظوری دیدی ہے جس کے بعد میاں نوازشریف کے پارٹی صدر بننے کے واضح امکانات روشن ہوگئے ہیں۔

اس سے قبل مسلم لیگ ن کے آئین کے تحت کوئی بھی نااہل یا ایسا شخص جو ممبر قومی اسمبلی بننے کا اہل نہیں تھا وہ پارٹی کا عہدہ بھی نہیں رکھ سکتا تھا۔ اس ترمیم کے بعد اب پارٹی کے آئین کے آرٹیکل 120 کی ذیلی شق 3 میں ترمیم کردی گئی ہے جس کے بعد عدالت سے نااہل شخص پارٹی عہدہ رکھ سکتا ہے۔

اجلاس میں وفاقی وزیر مشاہد اللہ نے نوازشریف پر اعتماد کی قرارداد بھی پیش کی جو منظور کرلی گئی، قرار داد میں نوازشریف کی بطور وزیراعظم کارکردگی اور ان کے چار سالہ دور میں ترقیاتی کاموں پر انہیں خراج تحسین پیش کیا گیا۔ جب کہ اس دوران وزیرداخلہ احسن اقبال نے احتساب عدالت میں آج پیش آنے والے واقعات پر بریفنگ دی۔

ن لیگ کے ذرائع کے مطابق اس ترمیم کی پارٹی کے جنرل کونسل اجلاس سے توثیق کرائی جائے گی اور الیکشن بل 2017 قومی اسمبلی سے منظور ہونے کے بعد پارٹی کی جنرل کونسل کا اجلاس بلایا جائے گا جس میں نوازشریف کو باضابطہ پارٹی صدر مقرر کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں